حکومت کا ٹیکسوں میں کمی کرنے کے لئے اہم قدم، عوام میں سکون کی لہر

حکومت لگ بھگ دو درجن ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے

اسلام آباد: حکومت آئندہ بجٹ میں لگ بھگ دو درجن ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کرنے کے لئے مختلف تجاویز پر غور کررہی ہے۔

پاکستان میں ڈیجیٹل معیشت کو فروغ دینے کے لئے ، حکومت کریڈٹ کارڈ کے استعمال سے تین سے پانچ سال کی مدت کے لئے ود ہولڈنگ ٹیکس اور ایف ای ڈی کی فیس کو ختم کرنے پر فعال طور پر غور کرے گی۔ اس وقت کل 40 ود ہولڈنگ ٹیکس ہیں اور زیر غور ہے کہ آئندہ فنانس بل 2021-22 کے ذریعے تقریبا دو درجن ود ہولڈنگ ٹیکس ختم کردیئے جائیں گے۔

Advertisement

بینکوں سے نقد رقم نکالنے ، معاہدہ ، فراہمی اور تنخواہوں پر جیسے بڑے ودہولڈنگ ٹیکس آنے والے بجٹ میں جاری رہیں گے جبکہ کم سے کم وصولی والے 10 سے 12 کو ختم کیا جاسکتا ہے۔

زیر غور ایک تجویز یہ ہے کہ بجٹ میں یا تو تنخواہ ٹیکس کی شرحوں کو کم کیا جائے یا کٹوتی کرنے والے الاؤنسز کی اجازت دی جائے۔ قانونی چارہ جوئی کو کم کرنے کے لئے ، ایف بی آر مختلف تجاویز پر غور کر رہا ہے جس میں پیراڈیم شفٹ لانے کے لئے ٹیکس دہندگان کو اپیل کے مختلف مراحل میں کل ملوث رقم کی 20 فیصد سے 50 فیصد رقم ادا کرکے معاملات نمٹانے کے لئے مختلف پیش کشیں کی جائیں گی۔

سرکاری اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ کچھ ود ہولڈنگ ٹیکس ہیں جہاں ایف بی آر نہ ہونے کے برابر رقم جمع کررہا ہے۔ ایف بی آر نے پایا ہے کہ 40 سے زائد ٹیکسوں کی مجموعی تعداد میں سے تقریبا 7 سے 10 ود ہولڈنگ ٹیکس نے اس کے تحت 85 فیصد وصولی کی ہے۔

Advertisement

ایف بی آر نے رواں مالی سال میں ابھی تک ود ہولڈنگ ٹیکس کی شکل میں ایک بہت بڑا حصہ جمع کیا ہے اور بورڈ پاکستان میں کاروبار کرنے میں آسانی کو یقینی بنانے کے لئے موجودہ ڈبلیو ایچ ٹی کے نصف حصے کو ختم کرنے پر غور کر رہا ہے۔ ایف بی آر اب ان تمام ڈبلیو ایچ ٹی کو ختم کرنے کا ارادہ رکھتا ہے جہاں یہ رکاوٹیں پیدا کررہا ہے اور اس کے نتیجے میں لاگت میں اضافہ ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے آئندہ بجٹ میں ود ہولڈنگ ٹیکس کے بڑے ریونیو اسپنرز کو برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وہ تمام ڈبلیو ایچ ٹی بھی جاری رکھیں گے جو معیشت کی دستاویزات کے لئے بطور آلہ استعمال ہوتے ہیں۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *