ٹیکسوں کے حوالے سے ایک اور نیا انکشاف عوام تیار ہو جائے

حکومت نے بینک ذخائر سے حاصل ہونے والے منافع پر ٹیکس کی شرح میں اضافہ کردیا۔

کراچی (اسٹاف رپورٹر) فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے ذرائع نے پیر کو بتایا کہ وفاقی حکومت نے بینک ذخائر سے حاصل ہونے والے منافع سے حاصل ہونے والی آمدنی پر انکم ٹیکس کی شرح موجودہ 10 فیصد سے بڑھا کر 15 فیصد کردی ہے۔

ذرائع نے مزید بتایا کہ فنانس بل ، 2021 کے ذریعے بینک ذخائر سے حاصل ہونے والے منافع کے ذریعہ حاصل ہونے والی آمدنی پر ٹیکس کی شرح میں اضافہ کرکے ایک بڑی تبدیلی کی گئی ہے۔

Advertisement

فی الحال ، بینک ڈپازٹ سے حاصل ہونے والے منافع پر 10 فیصد ود ہولڈنگ ٹیکس کی کمی کی اجازت ہے جن معاملات میں ٹیکس دہندہ منافع دہندگان کو سرٹیفکیٹ پیش کرتا ہے کہ ٹیکس سال کے دوران ادائیگی یا منافع 500،000 روپے یا اس سے کم ہوتا ہے۔

لہٰذا ، یکم جولائی 2021 سے ٹیکس سال میں 500،000 روپے یا اس سے کم کے منافع یا منافع پر بھی ود ہولڈنگ ٹیکس کی شرح 15 فیصد ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ مجوزہ ترمیم کی درخواست کے ساتھ ہی دیگر بچت اور سرمایہ کاری اسکیموں کے منافع پر ٹیکس سلوک کو بھی تبدیل کیا جائے گا۔

Advertisement

فنانس بل میں غیر کارپوریٹ افراد کے قرضوں پر منافع کے ذریعہ آمدنی میں 36 ملین روپے سے زیادہ کی تبدیلی کی بھی تجویز پیش کی گئی تھی ، جو فی الحال کسی خاص سلیب کی کم شرحوں پر ٹیکس عائد ہے۔ جہاں قرض پر منافع 36 ملین روپے سے تجاوز کر گیا ہے ، وہاں پوری رقم عام ٹیکس کی شرح پر قابل ٹیکس ہے۔ ذرائع نے مزید بتایا کہ 36 ملین روپے کی دہلیز کو گھٹا کر 5 ملین روپے کرنے کی تجویز ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *