Headlines

    پب جی کھیلنے سے منع کرنے پر نوجوان کی خود کشی

    لاہور: صدر بازار کے علاقے میں 20 سالہ نوجوان نے والد کے پب جی کھیلنے سے منع کرنے پر پنکھے سے لٹک کر زندگی کا خاتمہ کرلیا۔

    لاہور کے علاقے کرسچین محلہ کے رہائشی 20 سالہ جونٹی جوزف کا ہروقت پب جی کھیلنے پر والد سے جھگڑا ہوا تھا، والد کے ڈانٹنے پر جوزف اپنے کمرے میں چلا گیا اور صبح اس کی لاش پنکھے سے لٹکی ہوئی ملی۔

    جونٹی جوزف ایف سی کالج میں انٹر کا طالب علم تھا اور اسے پب جی کھیلنے کا جنون کی حد تک شوق تھا۔ اس کے قریب ہی ہیئر ڈریسر کی دکان بھی تھی جہاں وہ کام کرکے گھر کا مالی طور پر ہاتھ بٹاتا تھا تاہم دکان سے واپسی کے بعد رات گئے تک موبائل پر گیم کھیلتا رہتا تھا۔
    واضح رہے کہ پب جی نوجوانوں اور بچوں میں تیزی سے مقبول ہونے والا گیم ہے جسے جنون کی حد تک کھیلا جاتا ہے۔ ماہرین نفسیات نے بھی اس گیم کے مضر اثرات سے آگاہ کیا ہے۔ لاہور ہائی کورٹ میں پب جی پر پابندی کی درخواست بھی دائر کی گئی ہے جس پر عدالت نے پاکستان ٹیلی کمیونی کیشن کو پب جی پر پابندی سے متعلق فیصلہ کرنے کا حکم بھی دیا ہے۔

    Advertisement

    عدالتی حکم کے باوجود تاحال پب جی پر پابندی عائد نہیں کی جا سکی ہے۔