مسلم لیگ (ن) کے کارکنان کی آپسی رنجش  ۔۔۔ اپنے ہی لوگوں کا مذاق بنا دیا، حکومت اور مضبوط ہو گئی

    لاہور (اعتماد ٹی وی) پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کو گرانے کے لئے متحد ہوئی جماعتوں نے تحریک عدم اعتما د کے نام سے تحریک چلائی اور اس میں مسلم لیگ (ق) کو بھی شمولیت کی دعوت دی۔

     

     

    Advertisement

    شمولیت کے لئے وزراتوں کی تقسیم بھی طے کی گئی۔ ہر کسی کے مطالبات کو سامنے رکھتے ہوئے حکومت مخالف اتحاد  کو کامیاب بنایا  جا رہا ہے۔

     

     

    Advertisement

    ایسے میں کسی پارٹی کے کارکنان کی  آپسی رنجش بہت سے لوگوں کی دلچسپی کا باعث بن رہی ہے۔ ایسا ہی ایک بیان  نجی ٹی وی کے پروگرام میں  مسلم لیگ ن کے رہنما  محسن شاہ نواز نے  میزبا ن کے سوال کے جواب میں دیا۔ جس کو سن کو  تماشائی ہنسی سے لوٹ پوٹ گئے۔

     

     

    Advertisement

    میزبان نے  وزیر اعلیٰ پنجاب کے حمزہ شہباز کا نام دیا اور پوچھا کہ آئندہ وزیراعلیٰ پنجاب کا عہدہ کیا مسلم لیگ ن کے پاس رہے گا ؟ اور اگر رہے گا تو وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز بن رہے ہیں؟

     

     

    Advertisement

    جس پر ن لیگی رہنما محسن شاہ نواز نے  پنجابی زبان میں ایک دلچسپ مثال دی” سارا پنڈ مر جائے میراثی کی باری نہیں آنی”  یہ بات سنتے ہی میزبان سمیت ناظرین کی ہنسی چھوٹ گئی۔

     

     

    Advertisement

    ن لیگی رہنما نے کہا کہ یہ بات قبل از وقت ہے  تاہم حمزہ شہباز کے وزیراعلیٰ بننے کے کوئی چانسز نہیں ہیں۔ یہ بیان  حمزہ شہباز شریف کے جہانگیر ترین گروپ سے ملاقات کے بعد سامنے آیا ہے ۔

     

     

    Advertisement

    اس سے قبل حمزہ شہباز شریف نے خود میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا تھا  کہ تحریک عدم اعتماد کو کامیاب بنانے کے لئے کوششوں میں مصروف ہوں اور  جہانگیر ترین کی رہائش گاہ پر ان کے  گروہ سے ملاقات بھی اسی کوشش کا نتیجہ ہے  انشاء اللہ پنجاب کا اگلا وزیر اعلیٰ میں خود ہو نگا۔

     

     

    Advertisement