سپریم کورٹ نے سندھ حکومت کو سیدھی سیدھی سنا دی۔۔

    منگل کو سپریم کورٹ آف پاکستان نے کراچی میں صفائی ستھرائی کی ناگوار صورتحال پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت صوبے میں “مکمل طور پر ناکام” ہے۔

    عدالت عظمیٰ کی کراچی رجسٹری میں آج نالوں تجاوزات کیس کی سماعت ہوئی۔ بینچ کی سربراہی کرتے ہوئے چیف جسٹس گلزار احمد نے ایڈووکیٹ جنرل سندھ کو بتایا کہ صوبائی حکومت نے “پورے کراچی کو کوڈے میں تبدیل کردیا”۔

    چیف جسٹس نے غصے سے کہا ، “پورا شہر گندگی اور سیوریج کے پانی سے بھرا ہوا ہے۔” انہوں نے مزید کہا ، “مچھر ، مکھی اور جراثیم ہر جگہ موجود ہیں۔ لوگ پتھروں پر [سیوریج کے پانی کو عبور کرنے] پر چل رہے ہیں۔”

    Advertisement

    ایڈووکیٹ جنرل نے عدالت کو بتایا ، “دو ماہ میں ، حاجی لیمو گوٹھ کا صفایا ہوجائے گا۔”

    “آپ کو اقتدار میں آئے کتنے سال ہوگئے ہیں؟” اعلی جج نے پوچھا۔

    “آپ کا عہد لوگوں کے ساتھ ہونا چاہئے۔ لیکن آپ نے ان کے ساتھ کیا کیا؟” جسٹس گلزار نے جواب دیا۔ انہوں نے مزید کہا ، “کراچی سے کشمور تک صورتحال خراب ہے۔ جہاں جہاں بھی جائے صورتحال ایک جیسی ہے۔”

    Advertisement

    انہوں نے ایڈووکیٹ جنرل سے سندھ کی شاہراہوں پر قائم پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ بورڈ کے بارے میں پوچھا۔ “یہ کیا ہے؟ ہم اس طرح کے کام کرنے کی اجازت نہیں دے سکتے۔ آپ کسی اور کو معاہدہ کیسے دے سکتے ہیں؟” چیف جسٹس کو حیرت ہوئی۔

    چیف جسٹس نے کہا کہ یہاں “مکمل تباہی” ہوئی ہے اور سندھ حکومت مکمل طور پر ناکام ہوگئی۔

    Advertisement