مریم نواز نے نواز شریف کے وطن واپس آنے کے بارے میں اہم اعلان کر دیا۔

    مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ ان کے والد ، سابق وزیر اعظم نواز شریف کا علاج جیسے ہی مکمل ہو گا وہ وطن واپس آجائیں گے اور ان کی صحت خطرے سے باہر ہے۔

    مزید پڑھیں: حکومت نے سکول کھولنے کی ٹائمنگ کا باقاعدہ اعلان کر دیا۔

    ایوین فیلڈ اپارٹمنٹس نظرثانی درخواست کی سماعت میں شرکت کے لئے مریم نے منگل کو اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) میں پیشی کے بعد یہ ریمارکس دئیے۔
    مریم نے کہا کہ قانون کی نظر میں ہر ایک برابر ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ شریف خاندان الزامات میں دبا دیا گیا ہے۔
    انہوں نے کہا کہ عمران خان کہا کرتے تھے کہ اگر نواز بیرون ملک چلے گئے تو اس کا کوئی احتساب نہیں ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ عدالت کے ذریعہ ارشد ملک کیس کے فیصلے کے بعد ان کے والد کے خلاف مقدمہ خارج کردیا جانا چاہئے تھا۔

    Advertisement

    مزید پڑھیں: پنجاب حکومت کا جنوبی پنجاب بنانے کے لئے ایسا قدم کہ انتظامی امور کی دھجیاں اُڑا کے رکھ دی۔

    اس سے قبل عدالت پہنچنے پر ، مریم نے – لندن میں اپنے والد کے ساتھ ہونے والے سلوک کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ کوئی بھی اتنی عمر میں اپنے وطن سے دور نہیں رہنا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میاں صاحب کا علاج چل رہا ہے صرف کورونا وائرس کی وجہ سے اس میں تاخیر ہوئی ہے۔ آئندہ آنے والی اے پی سی کے بارے میں انہوں نے کہا کہ مجھے نہیں لگتا کہ نواز شریف ہمیں کہیں گے کہ اس میں شرکت نہ کریں۔
    مریم نے مزید کہا کہ نواز شریف پاکستان واپس جانے کے لئے ‘بے چین’ تھے۔ تاہم ان سے کہا گیا کہ جب تک ان کا علاج چل رہا ہے اس وقت تک ایسا نہ کریں۔

    مزید پڑھیں: متحدہ عرب امارات کا انتہائی افسوسناک قدم، پوری اسلامی دُنیا کے لئے زوال کا باعث۔

    Advertisement

    موجودہ حکومت کا تذکرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جو کچھ اس حکومت نے بویا تھا وہی کاٹا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مجھے لگتا تھا کہ اس حکومت کو اس طرح کی ناقص کارکردگی دینے میں پانچ سال لگیں گے۔ پانچ سالوں میں ان سے جو نقصان کی توقع کی جارہی تھی وہ صرف دو سال کے عرصے میں انہوں نے کر دکھایا۔
    آل پارٹیز کانفرنس (اے پی سی) کے موضوع پر مریم نواز نے کہا تھا کہ اپوزیشن کے لئے اسی صفحے پر جمع ہونا وقت کی ضرورت ہے۔
    عدالت نے سماعت کے بعد آج مریم اور ان کے شوہر کیپٹن (ر) محمد صفدر کے خلاف ایوین فیلڈ ریفرنس کی سماعت 23 ستمبر تک ملتوی کردی جبکہ نواز کی جانب سے دائر درخواستوں کو 10 ستمبر تک ملتوی کردیا گیا