Headlines

    ہندوؤں کے مندر کا معاملہ، چیف جسٹس پاکستان میدان میں آگئے، اہم مذہبی شخصیات گھیرے میں

    چیف جسٹس آف پاکستان کے واقعے کا نوٹس لینے کے بعد جمعرات کے روز ضلع کرک میں ہندو مندر میں غلط رویے کے الزام میں کم سے کم 300 افراد پر م قدمہ درج کیا گیا ہے جبکہ جمعیت علمائے اسلام کے مرکزی کردار مولوی شریف سمیت 31 کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

     

    پولیس نے جے یو آئی-ایف کے مقامی امیر رحمت سلام پر م قدمہ درج کیا ہے جنہیں آج ان کی رہائش گاہ سے گ رفتار کیا گیا تھا۔

    Advertisement

     

    دوسری طرف ، ہندو ٹرسٹ کے عہدے داروں نے دعوی کیا ہے کہ پولیس اس کام میں ملوث تھی اور ہجوم کو نقصان پہنچانے کے بعد بھاگ جانے میں مددگار تھی۔

     

    Advertisement

    پولیس سپرنٹنڈنٹ کے مطابق ، یہ واقعہ مندر کی بحالی کی وجہ سے شروع ہوا۔

     

    واضح رہے کہ پاکستان ہندو کونسل کے ایم این اے اور سرپرست ڈاکٹر رمیش کمار نے سپریم کورٹ آف پاکستان کی کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس آف پاکستان سے ملاقات کی اور کرک میں ہجوم کے ذریعہ ہندو سنت شری پرمہنس جی مہاراج کے مزار پر ہونے والا معاملہ اٹھایا تھا۔ جس پر چیف نے نوٹس لیا۔

    Advertisement