برطانیہ نے مسئلہ کشمیر پر بھارت کو وارننگ دے دی، بھارت میں تھر تھلی مچ گئی

    تفصیلات کے مطابق برطانوی پارلیمنٹ میں مقبوضہ جموں کشمیر میں ہونے والے معاملات پر آواز بلند کی گئی ہے۔

     

    برطانیہ نے ہندوستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں تمام پابندیاں ختم کرے اور ایک ٹیم کو صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے مقبوضہ علاقے کا دورہ کرنے کی اجازت دے۔ یہ مطالبہ برطانیہ کے سکریٹری برائے مملکت برائے انصاف رابرٹ بکلینڈ نے بدھ کے روز ویسٹ منسٹر ہال میں “کشمیر کی سیاسی صورتحال” پر بحث کا جواب دیتے ہوئے کیا ہے۔

    Advertisement

     

    اس مباحثے کے جواب میں ، برطانیہ کے وزیر خارجہ اور ترقیاتی دفتر کے وزیر نائجل ایڈمس نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے لئے کشمیر کی صورتحال اب بھی ایک مسئلہ بنی ہوئی ہے اور اسے کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جانا چاہئے۔

     

    Advertisement

    مزید پڑھیے: جنرل قمر جاوید باجوہ نے سب کے دل جیت لئے۔ آرمی چیف ہونے کا حق ادا کر دیا

     

    برطانوی ممبر پارلیمنٹ (ایم پی) سارہ اوون نے کہا مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈاؤن عوام کے تحفظ کے لئے نہیں بلکہ زبردستی لگایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 5 لاکھ سے زائد ہندوستانی فوجیوں نے مقبوضہ کشمیر کے عوام کو اسیر کر رکھا ہے۔ کشمیری مسلمانوں کو اسپتالوں میں جانے سے بھی روکا جارہا ہے

    Advertisement

     

    برطانوی رکن پارلیمنٹ ، جیمز بیری ڈیلی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں المناک واقعات پیش آ رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا ہمیں مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم کے خلاف متحد ہونا چاہئے۔

     

    Advertisement