پیٹرولیم مصنوعات بے لگام اضافہ، جانئے پیٹرول کی قیمت آج پھر کہاں جا پہنچی۔۔

اتوار کے روز حکومت نے مسلسل پانچویں بار تمام پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اگلے پندرہ دن کے لئے 6.6 فیصد اضافہ کردیا۔

 

وزیر اعظم آفس کے ایک اعلامیے کے مطابق ، ہائی اسپیڈ ڈیزل (ایچ ایس ڈی) اور پیٹرول کی سابقہ ​​ڈپو قیمتوں میں بالترتیب 2،88 روپے اور 2.70 روپے فی لیٹر اضافہ کیا گیا ہے۔ مٹی کے تیل اور لائٹ ڈیزل آئل (ایل ڈی او) کی قیمتوں میں بالترتیب 35.54 روپے اور 3 لیٹر کا اضافہ کیا گیا۔

Advertisement

 

اسی طرح ، ایچ ایس ڈی کی سابقہ ​​ڈپو قیمت 113.09 روپے سے بڑھ کر 116.07 روپے فی لیٹر ہوگئی ، جس میں 2،88 روپے یا 2.54pc کا اضافہ دکھایا گیا ہے۔ ایچ ایس ڈی زیادہ تر بھاری نقل و حمل کی گاڑیاں ، ٹرینوں اور زرعی انجنوں جیسے ٹرک ، بسوں ، ٹریکٹروں ، ٹیوب ویلوں اور تھریشر میں استعمال ہوتا ہے۔ یہ افراط زر میں اہم کردار ادا کرنے والوں میں سے ایک ہے۔ 30 نومبر سے اس کی قیمت میں 14.67pc (14.85 روپے) کا اضافہ ہوا ہے جب اسے فی لیٹر 101.22 روپے میں فروخت کیا گیا تھا۔

 

Advertisement

پٹرول کی قیمت 109.20 روپے سے بڑھ کر 111.90 روپے فی لیٹر ہوگئی ، جس میں 2.70 روپے (2.47pc) کا اضافہ دکھایا گیا ہے۔ پٹرول زیادہ تر نجی ٹرانسپورٹ ، چھوٹی گاڑیاں ، رکشہ اور دو پہیوں والی گاڑیوں میں استعمال ہوتا ہے۔ پٹرول کی قیمت 30 نومبر سے 11.13pc (11.20 روپے) بڑھ چکی ہے

 

مٹی کے تیل کی قیمت 3.54 روپے فی لیٹر (4.61pc) اضافے سے 80.19 روپے سے 76.65 روپے ہوگئی۔ مٹی کا تیل زیادہ تر بےاختیار عناصر اس کو پیٹرول میں ملنے اور کسی حد تک بہت دور دراز علاقوں میں روشنی کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ 30 نومبر کو مٹی کے تیل کی قیمت 65.29 روپے فی لیٹر سے گذشتہ دو ماہ کے دوران 18.6pc (14.90 روپے) کی حد سے بڑھ گئی ہے۔

Advertisement

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *