کورونا کی ویکسین غیر محفوظ، پاکستان کے سرکاری ادارہ صحت کا دعوٰی سامنے آگیا، لوگوں کے درمیان کھلبلی۔۔۔

    پاکستانی حکام نے اپنے فرنٹ لائن ہیلتھ کیئر ورکرز کو پورے ملک میں چینی سینوفرم ویکسین کے ٹیکے لگانا شروع کردیئے ہیں لیکن بدھ کے روز صحت کے حکام نے انتباہ کیا کہ یہ ویکسین 60 سال سے زیادہ عمر کے افراد، حاملہ خواتین اور دودھ پلانے والی ماؤں اور 18 سال سے کم عمر کے افراد کے لئے مناسب نہیں ہے،

     

    اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ 60 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں کو سینوفرم ویکسین نہیں دی جائے گی ان کو آکسفورڈ-آسٹرا زینیکا کی ویکسین AZD1222 کا ٹیکہ لگایا جائے گا۔

    Advertisement

     

    ایس پی ایم کے ڈاکٹر فیصل سلطان نے کہا کہ شاید بزرگ افراد کے لئے فائزر کی ویکسین سب سے موزوں آپشن ہے۔ آسٹر زینیکا کی ویکسین کوواکس (بین الاقوامی صحت اتحاد) کے توسط سے رواں ماہ پاکستان پہنچے گی جبکہ محدود تعداد میں فائزر کی ویکسین بھی اس سال مارچ میں دستیاب ہوگی۔

     

    Advertisement

    بزرگ افراد کے لیے دیگر مناسب ویکسینوں کے بارے میں سوالات کے جواب میں انہوں نے کہا کہ روسی ویکسین سپوتنک اور ایک اور چینی ویکسین کینسنینو جن کی آزمائش حال ہی میں پاکستان میں اختتام پزیر ہوچکی ہے بوڑھوں کو بھی قطرے پلانے کے لئے استعمال ہوسکتی ہے اور وہ جلد ہی ملک میں دستیاب ہوجائیں گی۔

     

    متعدی امراض کے کچھ دیگر ماہر ماہرین نے بھی تصدیق کی ہے کہ عمر رسیدہ افراد میں حفاظتی اور افادیت کے اعداد و شمار کی کمی کی وجہ سے 60 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں کے لئے چینی ویکسین سائنو کی سفارش نہیں کی گئی تھی اور انہوں نے مزید کہا کہ بوڑھوں اور حاملہ خواتین پر افادیت کا تعین کرنے کے لئے اس کی آزمائش جاری ہے۔ آغا خان یونیورسٹی ہسپتال (اے کے یو ایچ) کے ایک متعدی امراض کے ماہر ڈاکٹر فیصل محمود نے کہا کہ اعداد و شمار زیر التواء ہونے کی وجہ سے 60 سال سے زیادہ عمر والوں کو سینوفرم ویکسین نہیں دی جاسکتی ہے۔

    Advertisement

     

    حفاظتی ٹیکوں کے بارے میں وفاقی وزارت کے توسیعی پروگرام (ای پی آئی) نے ملک کے تمام بالغوں کے قطرے پلانے والے مراکز (اے وی سی) کو سینوفرم ویکسین (ویرو سیل) کے لئے آپریٹنگ طریقہ کار (ایس او پیز) بھی جاری کیا ہے ، انتباہ کیا ہے کہ یہ ویکسین 60 سال سے اوپر والے افراد کو نہیں دی جانی چاہئے۔ عمر کی عمر میں ، 18 سال سے کم عمر کے بچے ، حاملہ خواتین کے علاوہ بچے پیدا کرنے کی عمر کی خواتین بھی ویکسین کی دوسری خوراک کے دو ماہ بعد حاملہ ہونے سے گریز کریں۔

     

    Advertisement