میرا جسم میری مرضی کی اصل حقیقت سامنے آگئی، عوام میں شدید غصہ۔۔

لو ٹراینگل Love Triangle کو ہر کمرشل، ڈرامے اور فلم میں شامل کرنے مقصد صرف اور صرف عورت کے تقدس کو کم کرنا ہیں۔ کوئی بھی فلم اس کے بغیر مکمل نہیں ہوتی۔ یہ تمام خیالات ہالی ووڈ سے بالی ووڈ میں منتقل ہوتے ہیں اور پھر لالی ووڈ ان کو اپنا لیتا ہے آہستہ آہستہ یہ اس قدر بے حیائی بڑھا دیتے ہیں کہ انسان کہ لئے یہ ایک معمول کی بات ہو جاتی ہے۔

 

 

Advertisement

وہ ان باتوں کو بُرا خیال نہیں کرتا۔ اس طریقے کو اسلامی ملک کی سماجی اقدار کو گرانے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے اس کام کے لئے سب سے پہلے معاشرے کی برداشت کا معائنہ کیا جاتا ہے۔ اسی طرح این جی اوز جو عورتوں کے حقوق کی علمبردار ہیں سب نقصان پہنچانے والے بیرونی عناصر کے پیسوں سے چل رہی ہیں۔ ان کے ذریعے میرا جسم میری مرضی جیسی تحریک چلائی جاتی ہے کہ دیکھا جائے مسلم معاشرہ اس کو کتنا اور کیسے برداشت کرتا ہے۔

 

 

Advertisement

اس کے بعد یہ کنڑیکٹ ملٹی نیشنل کمپنیز کو دیا جاتا ہے جس کے لئے وہ اس کو ایک فلموگرافی کے ذریعے عوام میں پھیلا دیتے ہیں۔ اور آہستہ آہستہ اور اس میں مزید تیزی لاتے ہیں جیسے کہ پہلے عورت کو شلوار قمیض اور ڈوپٹے میں دیکھایا پھر بغیر ڈوپٹے کے پھر جنز ٹاپ میں اور پھر اس سے بھی جدید طرز کا لباس۔

 

 

Advertisement

اس نظام کے ذریعے آہستہ آہستہ یہ زہر ہمارے ملک میں پھیلایا جارہا ہے تا کہ اس سے ایک دوسرے کو آزاد خیال سمجھا جا سکے اور جو کوئی اس کے خلاف بولے اس کو دقیانوس اور تنگ نظر سمجھا جائے۔ ایسے شخص کا مذاق اُڑایا جاتا ہے۔ اس سے معاشرے میں لڑکا لڑکی کی دوستی اور طلاقوں کی شرح بڑھ رہی ہے۔

 

 

Advertisement

معاشرہ دن با دن بے حیائی کی طرف زیادہ ہو رہا ہے۔ اس کے بعد آئٹم سونگز کے ذریعے نوجوان نسل کی سوچ کو خراب کیا گیا، جیسا کہ بیان کیا گیا ہے کسی ملک کو شکست دینی ہو تو اس کی نوجوان نسل کو برائی کی طرف راغب کر دو۔

 

 

Advertisement

One thought on “میرا جسم میری مرضی کی اصل حقیقت سامنے آگئی، عوام میں شدید غصہ۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *