کیا آپ بھی نماز فجر کے بعد سو جاتے ہیں۔۔ جانئے اسلام اس حوالے سے کیا کہتا ہے

اسلاف میں بہت سے اسیے اصحاب گزرے ہیں جن سے فجر کی نماز کے بعد سونے کی معنات منقول ہیں۔البتہ قرآن و حدیث میں ایسی کوئی دلیل نہیں ملی جس سے یہ ثابت ہو کہ یہ ممنوع ہے۔ لیکن اسلاف اس کو ناپسند کرتے تھے۔

 

 

Advertisement

اس لئے کہ اسلام کے احکام کے مطابق یہ پتا چلتا ہے کہ یہ سونے کا ٹائم نہیں ہے فجر کے بعد تلاوت کی جائے ،پرندوں کو دیکھا جائے تو یہ فجر کے وقت سے چہچہانا شروع کر دیتے ہیں۔ مرغ تہجد کے وقت سے اذان دینا شروع کر دیتا ہے اس لئے رسول کریم ﷺ کا ارشاد ہے کہ مرغ کو بُرا نہ کہو کیونکہ یہ لوگوں کو نماز کے لئے جگاتا ہے۔ قرآن میں ارشاد ہے کہ اللہ نے رات آرام کے لئے بنائی ہے اور دن کام کے لئے۔

 

 

Advertisement

احادیث کے مطابق رسول اللہؐ نے فرمایا میری اُمت کے لئے اللہ نے صبح کے وقت میں برکت رکھی ہوئی ہے۔

 

 

Advertisement

رات کو جلد سونا اور صبح جلد اُٹھنا اور دوپہر کو قیلولہ کرنا چاہیے، کیونکہ شیطان قیلولہ نہیں کرتا۔ سونے کا جو فطرتی وقت ہے عشاء پڑھتے ہی سو جانا اور تہجد کے وقت اٹھنا۔ مسلمان کے دور اقتدار میں اسلامی قوانین رائج تھے اور آج یہ طریقے غیر مسلم لوگوں نے اپنائے ہیں۔ جیسے کے چائنا میں صبح کے وقت تمام بازار کھلا ہوتا ہے اور کام کے اوقات شروع ہو جاتے ہیں۔

 

 

Advertisement

فجر کے بعد سونے کو اسلام نے پسند نہیں کیا ۔ لیکن یہ حرا م نہیں ہے۔

 

 

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *