دیوارِ چین کی اصل حقیقت آخر کیا ہے۔ ۔ ۔

دیوارِ چین کے بارے میں حقائق:

دیوارِ چین کو انسانی ہاتھوں سے تعمیر کی گئی دنیا کی سب سے لمبی دیوار ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ یہ دیوار اس قدرلمبی ہے کہ اس کی اصل لمبائی آج تک معلوم نہیں ہو سکی، اور ایک نئی تحقیق کے مطابق اس کی لمبائی 21 ہزار کلو میٹر بتائی گئی ہے۔

ہماری اس زمین کی گولائی 40 ہزار کلومیٹر ہے، یوں اگر دیوارِ چین کو سیدھا کیا جائے تو یہ آدھی دنیا تک پھیل جائے گی۔

Advertisement

دیوارِ چین دراصل صرف ایک دیوار نہیں بلکہ 16 کے قریب دیواروں کا ایک جال ہے، جسے پچھلے 2 ہزار سالوں میں مختلف ادوار میں تعمیر کیا جاتا رہا۔دیوار چین کا آغاز آج سے تقریباً 2 ہزار سال پہلے چائنہ کے پہلے بادشاہ چن شی وانگ نے کیا تھا۔

اس دیوار کو بنانے کا اصل مقصد شمال کی جانب سے آنے والے خانہ بدوش جنگی قبائلوں کو روکنا تھا۔ جو چائنہ میں لوٹ مار کر کے اپنے علاقوں میں واپس لوٹ جایا کرتے تھے۔

دیوارِ چین کو اژدھے کا سر اس لئے کہا جاتا ہے کیونکہ دور سے اس دیوار کو دیکھنے سے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ دیوار کوئی اژدھا ہے جو پانی پی رہا ہے۔

Advertisement

اس دیوار کے درمیان میں نظر آنے والی سفیدی دراصل انسانی ہڈیاں نہیں بلکہ چاول کا وہ پیسٹ ہے جس کو اس کی تعمیر کے وقت استعمال کیا گیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *