میاں بیوی کا آپس میں جماع کرنے کا جائز طریقہ۔۔ مولانا صاحب کی کھل کر وضاحت

مولانا مکی الحاجی سے سوال کیا گیا کہ اپنی بیوی سے آگےاور پیچھے دونوں سے جماع کر سکتا ہے؟ مولانا صاحب نے جواباً آنحضورؐ کا فرمان بیان کیا کہ جو آدمی عورت کو غلط استعمال کرتا ہے اس پر اللہ کی لعنت ہوتی ہے۔

 

 

Advertisement

مولانا صاحب نے بتایا کہ آج سے قریباً دس سال پہلے کوئی بھی اس مسئلے کے متعلق سوال نہیں کرتا تھا لیکن اب یہ سوال عام ہے اس کی وجہ معاشرے میں پھیلتی بے راہ روی ہے جو کہ سوشل میڈیا کی مرہون منت ہے۔ کل تک جو چیزیں سنیما گھروں میں دیکھتے تھے لوگ اب ان کے پاس موبائل ہے جس میں وہ جو مرضی جب مرضی دیکھ لیتے ہیں۔

 

 

Advertisement

اور پھر کچھ کتابوں میں ان چیزوں کو جائز کہا گیا ہے۔ جس کی وجہ سے لوگ بے راہ روی کا شکار ہورہے ہیں وہ گناہ و ثواب کی تمیز نہیں کرتے۔ اس سلسلے میں حضورؐ نے واضع اس آدمی کو لعنتی کہا ہے۔ تو جو اس لعنت کا حق دار خود کو سمجھتا ہے وہ جو دل چاہے کرے۔

 

 

Advertisement

حدیث میں ہے کہ ایک آدمی نے انصاری لڑکی سے شادی کی۔ آدمی مہاجر تھا۔ ان کی شادی کے بعد خلوت میں جب آدمی نے بیوی سے مختلف طریقوں سے جماع کرنا چاہا تو بیوی بولی کہ ہمارے ہاں ایسے نہیں ہوتا ہم تو سونے کی حالت کی طرح ہم بستری کرتے ہیں۔ اس پر بحث ہوئی اور دونوں معاملہ لے حضورؐ کی خدمت میں حاضر ہوئے تو حضورؐ نے فرمایا بس عورت کا پچھلا حصہ استعمال نہ کرو ۔ باقی کسی بھی طریقے سے ہمربستری کی جا سکتی ہے۔

 

 

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *