کیا آپ کے جسم پر بھی ایسے تل ہیں۔۔ تو جانئے ان کا آپ کی زندگی میں مطلب کیا ہے

انسانی جسم پر تل علم جعفر کی روشنی میں:

 

تل اگر چہرے اور بھنوں کے درمیان ہو گا تو وہ عدل پسند ہوگا اگر بائیں طرف ہو تو وہ مخلص ہوگا اور اگر دائیں طرف ہو تو خیال رکھنے والا ہو گا۔

Advertisement

 

 

اگر تل دائیں آنکھ کے اوپر ہو تو ایسے لوگوں کا دشمن ان کے سامنے ہو گا ایسے لوگوں کو سورۃ الفلق پڑھ کر دن کا آغاز کرنا چاہیے۔

Advertisement

 

 

اگر تل بائیں آنکھ کے اوپر ہو تو ایسے لوگ جلد بھروسہ کر لیتے ہیں۔ ایسے لوگوں کو سورہ العصر پڑھنی چاہیے۔ اس سے لوگو ں کو پہچاننے میں مدد ملتی ہے۔ اگر تل دائیں گال پر ہے تو وہ معصومیت کی طرف اشارہ ہے۔ اگر بائیں گال پر ہے تو وہ شرافت کی طرف اشارہ ہے۔ اگر ناک پر ہے تو ایسے شخص کے غصے میں اس کا پیار شامل ہے۔اگر تل ہونٹ کے اوپر ہے تو وہ پیار میں جلدی کیا کریں گے۔ اگر ہونٹ کے نیچے تل ہے تو ان کو چاہیے محفل میں خاموش رہا کریں۔

Advertisement

 

 

اگر تل گردن پر ہے تو وہ اپنی زندگی سے زیادہ دوسروں کو چاہنے والے ہوں گے۔ اگر تل سینے پر ہے تو وہ حساس مزاج کے مالک ہیں۔ اگر تل کاندھے پر ہے تو ایسا شخص جس کو اپنے کاندھے پر سوار کرے گا وہ اس کا گلہ کاٹے گا بھروسے مند لوگوں سے نقصان پہنچے گا۔ ایسے افراد کوسورہ الناس سے دن کا آغاز کرنا چاہیے۔

Advertisement

 

 

جس کے بازو پر تل ہو وہ محنت کش ہو گا جس کے ہاتھ پر زندگی کی لکیر پر تل ہوگا وہ زندگی کی بڑی سے بڑی مشکل کو آسانی سے حل کر لے گا۔ جس کے دولت کی لکیر کے ساتھ تل ہو گا وہ سخی ہو گا۔ جس کے علم کی لکیر کے ساتھ تل ہو گا اس میں علم کی تڑپ ہو گی۔

Advertisement

 

 

جس کے دل کی لکیر پر تل ہوگا وہ رحم دل ہو گا جس کے دماغ کی لکیر پر تل ہو گا وہ اپنی سوچ سے دنیا بدل سکتا ہے۔

Advertisement

 

 

جس کے اُلٹے ہاتھ یعنی ہاتھ کے اوپری سطح پر تل ہو گا وہ کچھ کر دکھانے کا جوش رکھے گا۔ جس کے پیٹ پر تل ہو گا وہ کھانے پینے کا شوقین ہو گا۔ جس کی پیٹھ پر تل ہو گا دشمن اسکی پیٹھ پر وار کریں گے۔

Advertisement

 

 

امام جعفر نے فرمایا انسان جسم پر سات ایسے نشان پائے جاتے ہیں جن کو عصرانی زبان میں ان الفاظ میں بلایا جاتا ہے۔

Advertisement

 

بیار،قبور ، مسّتہ، میارتم،وخت،تلہ،ارھصم

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *