Headlines

    مسجد نبویؐ کو بند کیوں رکھا جاتا ہے

    روایت کے مطابق دنیا کے مختلف کونوں سے چند علماء کرام حرم شریف پر موجود کسی موضوع پر محوِ گفتگو تھے کہ ایک عربی نے ان سے سوال کرتے ہوئے پوچھا کہ کیا آپ میں سے کوئی قرآن کی وضاحت کر سکتا ہے کہ خانہ کعبہ زائرین کے لئے ہر وقت کیوں کھلا رہتا ہے جبکہ مسجدِ نبوی ﷺ کو رات کے ایک مخصوص حصے میں ایک خاص وقت کے لئے بند کر نے کے پیچھے کونسی تاریخی عوامل اور حکمت پوشیدہ ہے۔ جس پر ایک صاحبِ دل نے کھڑے ہو کر آیت الکرسی کی تلاوت شروع کر دی جس کے اندر ارشادِ باری تعالیٰ ہے:” کہ اس کے سوا کوئی معبود نہیں جو ہمیشہ قائم اور زندہ رہنے والا ہے جسے نہ تو اونگھ آتی ہے نہ نیند۔” جس کے بعد انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ خانہ خدا ہے جسے ملنے اور اس کے گھر کی زیارت کے لئے وقت کی کوئی قید نہیں۔ اور یہی وجہ ہے کہ اس کو کسی بھی وقت بند نہیں کیا جا سکتا۔

    جس کے بعد انہوں نے مسجدِ نبوی ﷺ کو کچھ دیر کے لئے بند کرنے کی وجوہات بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ یہ سلسلہ عوی خلیفہ کے دور سے جاری ہے جب انہوں نے ایک خاندان کے کچھ لوگوں کو یہ فرض سونپا تھا کہ وہ پچھلی رات اور تہجد کی نماز سے قبل حرم نبوی ﷺ کی صفائی کیا کریں۔ اور اس کام میں کئی خواجہ سرا بھی شامل ہوا کرتے تھے۔ اگرچہ وقت کے ساتھ ساتھ خاص کر عہدے بنو عباس میں اس میں کچھ تبدیلیاں بھی کی گئیں۔ لیکن یہ خوش نصیب لوگ آج بھی اس مقدس فرض کو انجام دینے میں نہ صرف سعودی حکومت کی طرف سے پوری طرح با اختیار ہیں بلکہ ایک تسلسل سے اس کو انجام بھی دے رہے ہیں۔

    Advertisement